ایرانی تقویم

ایرانی تقویم دنیا میں رائج شمسی تقاویم میں سے ایک بہت قدیم تقویم ہے۔ جو ہزاروں سالوں سے ایرانی قدیم ترین تہذیبوں میں رائج تھی اور اب تک بعض ایرانی اس کو استعمال کرتے ہیں۔ اور اس کو خورشیدی (یعنی شمسی) تقویم کہتے ہیں۔ یہ تقویم گریگورین تقویم کے مقابلے میں سورج سے زیادہ بہتر مطابقت رکھتی ہے۔ ایرانی تقویم کو ایرانی مسلمانوں نے شمسی ہجری تقویم میں بدل دیا اور اس کو “تقویم ہجری شمسی“ یا “سال نمائے ہجری خورشیدی“ بھی کہتے ہیں۔ یہ جدید ہجری تقویم ایران اور افغانستان کی سرکاری تقویم ہے۔ اور بعض دیگر ممالک میں بھی رائج ہے۔

Seasons1.svg

ایرانی ان قدیم ترین تہذیبوں میں سے ہیں جنہوں نے چاند کی بجائے سورج پر انحصار کرتے ہوئے اپنی تقویم بنائی۔ اس تقویم میں شمالی نصف کرہ میں بہار کا پہلا دن سال کا بھی پہلا دن ہوتا ہے جو 21 مارچ ہوتا ہے جسے نوروز کہتے ہیں۔

سال کے پہلے 6 مہینے لگاتار 31 دنوں کے ہوتے ہیں اور اس کے بعد 5 مہینے 30 دنوں کے ہوتے ہیں۔ بارہواں اور آخری مہینہ 29 دنوں کا ہوتا ہے مگر لیپ سال لیپ کا سال یعنی لوند کے سال میں یہ 30 دنوں کا ہوتا ہے۔

علم نجوم کے بارہ برج دراصل ایرانی تقویم کے مہینوں کے دری زبان میں نام ہیں۔

ترتیبدنوں کی تعدادفارسیکردیدریافغانی پشتو
IPAمقامی رسم الخطRomanizedمقامی رسم الخطRomanizedمقامی رسم الخطIPAمقامی رسم الخط
131farvardinفروردینXakelêweخاكه ليوهhamal (Aries)حملwrajوری
231ordibeheʃtاُردِی بہشتGolanگولا نsawr (Taurus)ثورʁwajajغویی
331xordɒdخردادJozerdanجوزه ردانdʒawzɒ (Gemini)جوزاʁbargolajغبرګولی
431tirتیرPoshperپووش په رsaratɒn (Cancer)سرطانtʃungaʂچنګاښ
531mordɒd / amordɒdمرداد / امردادGelawêjگلاويژasad (Leo)اسدzmarajزمری
631ʃahrivarشهریورXermananخه رمانانsonbola (Virgo)سنبلهwagajوږی
730mehrمہرRezberره زه به رmizɒn (Libra)میزانtəlaتله
830ɒbɒnآبانGelarêzanگه لا ريژانhaqrab (Scorpio)عقربlaɻamلړم
930ɒzarآذرSermawezسه ر ما وه زqaws (Sagittarius)قوسlindəjلیندۍ
1030dejدَےBefranbarبه فرانبارdʒadi (Capricorn)جدیmarʁumajمرغومی
1130bahmanبہمنRêbendanريبه ندانdalwa (Aquarius)دلوsalwɑʁəسلواغه
1229/30espand / esfandاسفندReshemeره شه مهhowt (Pisces)حوتkabکب

ہزاروں سال سے رائج ایرانی تقویم کو جلالی تقویم کی نئی شکل بھی دی گئی جسے عمر خیام اور اس کے ساتھیوں نے سلطان جلال الدین ملک شاہ سلجوقی (1072-1092ء) کے کہنے پر بنایا گیا تھا۔

سلطان جلال الدین (ملک شاہ اول) کے نام پر اس تقویم کا نام جلالی تقویم رکھا گیا تھا اور یہ 15مارچ 1079 سے نافذ کیا گیا تھا۔ عمر خیام نے رسدگاہ میں تحقیق سے دریافت کیا تھا کہ زمین کا سورج کے گرد چکر 365.24219858156 دنوں میں پورا ہوتا ہے۔ اس کا یہ نتیجہ آج بھی اعشاریہ کے بعد چھ ہندسوں تک صحیح مانا جاتا ہے۔ اس پیمائش سے 5500 سالوں میں صرف ایک گھنٹے کی غلطی ہوتی ہے جبکہ گریگورین تقویم جو چار صدیوں بعد یورپ میں استعمال ہونا شروع ہوا اس میں محض 3300 سال میں پورے ایک دن کی غلطی ہونے کی گنجائش ہے۔

Other Languages
العربية: تقويم إيراني
asturianu: Calendariu persa
беларуская (тарашкевіца)‎: Іранскі каляндар
brezhoneg: Deiziadur pers
Esperanto: Persa kalendaro
Bahasa Indonesia: Kalender Iran
Basa Jawa: Tanggalan Iran
македонски: Ирански календар
Nederlands: Iraanse kalender
norsk nynorsk: Den iranske kalenderen
oʻzbekcha/ўзбекча: Eroniy taqvim
português: Calendário persa
Simple English: Persian calendar
српски / srpski: Ирански календар
srpskohrvatski / српскохрватски: Iranski kalendar
Basa Sunda: Kalénder Iran
татарча/tatarça: Шәмси тәкъвим
Tiếng Việt: Lịch Iran